جون 23, 2024

معاشی چیلنجز میں آئی ایم ایف کا کردار

تحریر: قادر خان یوسفزئی

خیال کیا جاتا ہے کہ پاکستان میں آئی ایم ایف کو فنڈ دینے کیلئے سخت شرائط عائد نہیں کرنا چاہیے، لیکن یہ کہتے ہوئے ہم فراموش کر دیتے ہیں کہ قرض لینے والا ملک اپنے مالیاتی نظام کی خرابیوں کی وجہ سے آئی ایم ایف کے پاس جاتا ہے اور وہاں سے قرض ملنے کے بعد دیگر عالمی مالیاتی ادارے یا دوست ممالک فیصلہ کرتے ہیں کہ معاشی بحران میں مبتلا ملک کو امداد یا قرض فراہم کیا جائے یا نہیں۔ یہ نوٹ کرنا ضروری ہے کہ آئی ایم ایف معاشی چیلنجز کا سامنا کرنے والے ممالک کو مالی امداد اور پالیسی مشورے فراہم کرتا ہے، لیکن یہ امداد شرائط کے ساتھ آتی ہیں، جن میں کچھ معاشی اصلاحات کو نافذ کرنا بھی شامل ہے۔ اگر کسی ملک کے پاس اپنے طور پر اصلاحات نافذ کرنے کیلئے وسائل اور سیاسی عزم ہے تو وہ آئی ایم ایف کی مدد کے بغیر اپنے معاشی مسائل کو حل کرنے کے قابل ہوسکتا ہے۔ تاہم، بہت سے معاملات میں، ممالک امداد کیلئے آئی ایم ایف سے رجوع کرتے ہیں کیونکہ ان کے پاس اپنے معاشی چیلنجوں سے نمٹنے کیلئے وسائل نہیں ہوتے، یا انہیں آئی ایم ایف پروگرام کے ساتھ آنے والی حمایت اور ساکھ کی ضرورت پڑتی ہے۔
پاکستان کو حالیہ برسوں میں متعدد معاشی چیلنجوں کا سامنا ہے، جن میں اعلیٰ افراط زر، بڑے مالی اور تجارتی خسارے اور غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر کی کمی شامل ہیں۔آئی ایم ایف نے ماضی میں ان چیلنجز سے نمٹنے کیلئے پاکستان کو متعدد بار مالی معاونت فراہم کی۔ بدقسمتی سے حکومت کی پالیسیوں اور حکمت عملی میں قرض پر انحصار کے بجائے برآمدات کے ذریعے زر مبادلہ حاصل کرنے کا رجحان کم نظر آیا ہے۔پاکستان اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کے درمیان حالیہ معاہدے کو مشکل قرار دیا جا رہا ہے کیونکہ اس میں متعدد مشکل اصلاحات شامل ہیں جن پر آئی ایم ایف سے کئے معاہدے پر عمل درآمد کرنا پڑے گا۔یہ اصلاحات بنیادی معاشی عدم توازن اور ساختی مسائل کو حل کرنے کیلئے ڈیزائن کی گئی ہیں جو ملک کی اقتصادی ترقی اور استحکام میں رکاوٹ بن رہے ہیں۔عام طور پر، آئی ایم ایف کے پروگراموں میں ممالک کو مالیاتی پالیسی، تجارت اور سرمایہ کاری جیسے شعبوں میں اصلاحات نافذ کرنے کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ کاروباری ماحول کو بہتر بنایا جا سکے اور پائیدار معاشی ترقی کی حوصلہ افزائی کی جا سکے۔
پاکستان کے معاملے میں، آئی ایم ایف کے ساتھ حالیہ معاہدے میں ٹیکس وصولی، توانائی کے شعبے میں سبسڈی اور سرکاری ملکیت کے کاروباری اداروں کی تنظیم نو جیسے شعبوں میں اصلاحات شامل ہونے کی توقع ہے۔ان اصلاحات کو نافذ کرنے میں ممکنہ طور پر مشکل فیصلے اور تجارتی رکاوٹیں شامل ہوں گی، اور اس کے نتیجے میں قلیل مدتی مسائل پیدا ہوں گے۔ تاہم، معیشت کو طویل مدت میں زیادہ پائیدار راستے پر ڈالنے کیلئے یہ ضروری بھی ہے۔ اس وجہ سے، معاہدے کو سخت کہا جا رہا ہے کیونکہ مالی سختی اور ساختی اصلاحات کے نتیجے میں قلیل مدت میں افراط زر میں اضافے کا باعث بن سکتے ہیں، جیسے توانائی کی سبسڈی میں کمی اور ٹیکس وصولی میں اضافہ تاہم، اگریہ اصلاحات معیشت کو زیادہ پائیدار راستے پر ڈالنے میں کامیاب ہو جاتی ہیں، تو یہ طویل مدت میں افراط زر کو کم کرنے میں مدد مل سکتی ہے.
امکان ہے کہ آئی ایم ایف معاہدے کے تحت درکار اصلاحات معاشرے کے مختلف گروہوں کو مختلف سطحوں پر متاثر کریں گی۔ کچھ اصلاحات، جیسے ٹیکس وصولی میں اضافہ، امیروں اور کاروباری اداروں کیلئے ٹیکس کا بوجھ بڑھ سکتا ہے۔ تاہم، یہ بھی ممکن ہے کہ اصلاحات طویل مدت میں بہتر معاشی ترقی اور کاروباری مواقع کا باعث بنے۔ افراط زر اور معاشی اصلاحات کے اثرات عام طور پر آمدنی کی سطح سے قطع نظر پوری آبادی پر پڑتے ہیں۔ اگرچہ امیروں کے پاس قلیل مدتی معاشی مشکلات کا سامنا کرنے کیلئے زیادہ وسائل ہو سکتے ہیں، لیکن افراط زر اب بھی ان کی قوت خرید اور سرمایہ کاری کے فیصلوں کو متاثر کر سکتا ہے۔ اسی طرح آئی ایم ایف پروگرام کے تحت درکار اصلاحات معیشت کے مختلف شعبوں پر نمایاں اثرات مرتب کرتی ہیں جن میں وہ شعبے بھی شامل ہیں جن پر امیر اور با اثر افراد کا غلبہ ہے۔
آئی ایم ایف کے پروگراموں میں عام طور پر ایسی شرائط شامل ہوتی ہیں جن کا مقصد معیشت کو مستحکم کرنا اور اس کے طویل مدتی امکانات کو بہتر بنانا ہے۔ ان شرائط میں حکومتی اخراجات کو کم کرنا، ٹیکسوں میں اضافہ اور توانائی کے شعبے اور سرکاری ملکیت کے اداروں جیسے شعبوں میں ڈھانچہ جاتی اصلاحات شامل ہوسکتی ہیں۔ یہ اقدامات مختصر مدت میں افراط زر پر دباؤ ڈال سکتے ہیں، کیونکہ وہ اشیاء اور خدمات کیلئے اعلیٰ قیمتوں کا باعث بن سکتے ہیں۔ پاکستان اورآئی ایم ایف کے درمیان حالیہ معاہدے کو مشکل قرار دیا جا رہا ہے کیونکہ اس میں متعدد مشکل اصلاحات شامل ہیں جن پر حکومت پاکستان کو آئی ایم ایف سے مالی امداد حاصل کرنے کیلئے عمل درآمد کرنا پڑے گا۔ یہ اصلاحات بنیادی معاشی عدم توازن اور ساختی مسائل کو حل کرنے کیلئے ڈیزائن کی گئی ہیں جو ملک کی اقتصادی ترقی اور استحکام میں رکاوٹ بن رہے ہیں پاکستان میں افراط زر پر بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کے پروگرام کے درست اثرات کا انحصار متعدد عوامل پر ہوگا، جن میں پروگرام کی مخصوص شرائط، ملکی معیشت کی حالت اور حکومت کی جانب سے مطلوبہ اصلاحات پر عمل درآمد کی تاثیر شامل ہیں۔آئی ایم ایف کے پروگراموں میں حکومتی اخراجات کو کم کرنا، ٹیکسوں میں اضافہ اور توانائی کے شعبے اور سرکاری ملکیت کے اداروں جیسے شعبوں میں ڈھانچہ جاتی اصلاحات شامل ہوسکتی ہیں۔ یہ اقدامات مختصر مدت میں افراط زر پر دباؤ ڈال سکتے ہیں۔
آئی ایم ایف کی فیصلہ سازی اس کے قواعد و ضوابط کے مطابق ہوتی ہے اور یہ کسی ملک کی معاشی صورتحال اور اس کے اصلاحاتی پروگرام کی فزیبلٹی کے مکمل جائزے پر مبنی ہوتی ہے یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ آئی ایم ایف قسطوں میں مالی امداد فراہم کرتا ہے اور ممالک کو صرف اس وقت فنڈز تقسیم کرتا ہے جب وہ پروگرام کے تحت ضروری اصلاحات پر عمل درآمد میں پیش رفت کا مظاہرہ کرتے ہیں۔ اگر خاطر خواہ پیش رفت نہ کی جائے تو آئی ایم ایف ضروری اصلاحات ہونے تک امداد روک سکتا ہے۔ آخر میں آئی ایم ایف کا کسی ملک کو مالی امداد فراہم کرنے کا فیصلہ ایک پیچیدہ عمل ہے جو ملک کے معاشی چیلنجز سے نمٹنے اور میکرو اکنامک استحکام کے حصول کیلئے اصلاحات کے نفاذ کی صلاحیت پر مبنی ہے ضرورت ہے کہ حکومت مالیاتی بحران سے آنے والی مزید آزمائشوں سے بچنے اور زر مبادلہ کے حصول کیلئے برآمدات واوورسیز پاکستانیوں کی ترسیلات زر پر توجہ مرکوز کرے۔

Facebook
Twitter
Telegram
WhatsApp
Email

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

two × 3 =