اپریل 23, 2024

شمالی شام میں امریکہ کا نیا محاذ ۔۔۔۔۔

تحریر: قادر خان یوسف زئی

امریکہ نے مشرق وسطیٰ کی گھمبیر صورت حال میں یکدم شمالی شام کو نشانہ بنا کر امن کے قیام کی کوششوں کو شدید دھچکا پہنچایا ہے۔ شمالی شام میں حالیہ امریکی فوجی حملوں نے مشرق وسطیٰ میں پہلے سے ہی غیر مستحکم صورتحال میں پیچیدگی کی ایک نئی تہہ ڈال دی ہے۔ امریکی وزیر دفاع لائیڈ آسٹن نے ان کارروائیوں کو ایرانی حمایت یافتہ ملیشیا گروپوں کے خلاف ’’ اچھی طرح سے ہدف بنائے جانے والے حملوں‘‘ کے طور پر بیان کیا، جو عراق اور شام میں امریکی اہلکاروں کی حفاظت کے لیے کئے گئے تھے۔ تاہم، ان حملوں نے ان خدشات کو جنم دیا ہے کہ آیا امریکہ مشرق وسطیٰ میں ایک نیا محاذ کھولنے کا دوبارہ ارادہ رکھتا ہے جب کہ غزہ کی صورت حال ابتر ہوتی جا رہی ہے اور جنگ بندی کے امکانات معدوم نظر آتے ہیں۔
امریکی فوج کے شمالی شام میں ( نام نہاد) ’’ دفاعی‘‘ حملے شروع کرنے کے فیصلے کو ایرانی حمایت یافتہ ملیشیا گروپوں کے حالیہ حملوں سے منسوب کیا گیا۔ اگرچہ امریکہ اس بات پر زور دیتا ہے کہ ان کارروائیوں کا مقصد اس کے اہلکاروں اور مفادات کا تحفظ کرنا تھا، لیکن حملوں نے وسیع علاقائی مضمرات کے بارے میں کئی اہم سوالات کو جنم دیا ہے۔ حملوں میں مشرق وسطیٰ کے دو بڑے کھلاڑی، امریکہ اور ایران کے درمیان موجودہ کشیدگی مزید بڑھ گئی ہے۔ ایران نے ان حملوں کو جارحیت کا بلا جواز اقدام قرار دیتے ہوئے اس کی مذمت کی ہے۔ خطے میں پہلے ہی کشیدہ صورت حال ہے اور ان حالات میں امریکی حملہ اور امریکہ کی جانب سے مزید 900اہلکار بھجوانے کے عندیہ نے واضح کیا ہے کہ مسلم اکثریتی ممالک کی خاموشی اور رسمی بیانات کے بعد مغرب کو اندازہ ہوچکا ہے کہ ان حالات میں کچھ بھی کر لیں یہی موقع غنیمت ہے ۔
واضح رہے کہ مشرق وسطیٰ پراکسی تنازعات کا شکار ہے، مختلف علاقائی اور بین الاقوامی قوتیں مختلف دھڑوں کی حمایت کر رہے ہیں۔ امریکہ اور ایران کے درمیان کسی بھی قسم کی کشیدگی ان پراکسی تنازعات کو مزید ہوا دے سکتی ہے، جس سے پورے خطے میں تشدد اور عدم استحکام میں شدت آ سکتی ہے۔ ان حملوں کا وقت اہم ہے، کیونکہ غزہ کی صورت حال بدستور تشویشناک ہے، جس میں فوری طور پر جنگ بندی کا کوئی امکان نہیں ہے۔ غالب امکان ہے کہ یہ امریکی اقدامات اسرائیل فلسطین تنازع کو کم کرنے کی کوششوں سے توجہ ہٹا سکتے ہیں۔ ایرانی وزیر خارجہ کے بیروت، لبنان میں کیے گئے ریمارکس، جس میں الزام لگایا گیا تھا کہ امریکہ اسرائیل کو’’ غزہ کو تباہ‘‘ کرنے کا موقع فراہم کرنا چاہتا ہے، نے امریکی ارادوں پر شکوک کی ایک تہہ ڈال دی ہے۔ اگرچہ یہ الزامات متنازع ہیں، لیکن یہ خطے میں بین الاقوامی سیاست کے پیچیدہ عمل کو واضح کرتے ہیں۔ اس بات پر زور دینا ضروری ہے کہیں یہ حملے امریکہ نے ایران کو اشتعال دلانے یا مشرق وسطیٰ میں کوئی نیا محاذ کھولنے کے اپنے ارادے سے تو نہیں کئے۔
حملوں کو امریکی اہلکاروں کی حفاظت کے لیے دفاعی اقدامات کے طور پر بیان کیا گیا ہے لیکن اس کے لئے عراق اور ایران کی جانب سے ان مواقعوں کا حوالہ دیا گیا ہے جو غزہ کی صورت حال سے پہلے رونما ہوئے تھے تاہم ردعمل کے نام پر ان حملوں کے وقت اور ممکنہ نتائج کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔ان بڑھتے ہوئے تنا کے درمیان، سفارت کاری اور کشیدگی میں کمی کی ضرورت کو زیادہ نہیں سمجھا جا سکتا۔ مشرق وسطیٰ پہلے ہی تنازعات اور بحرانوں سے بھرا ہوا ہے اور ایک اضافی محاذ خطے کے لوگوں کے مصائب کو بڑھا سکتا ہے۔ علاقائی اور عالمی طاقتوں سمیت عالمی برادری کو مذاکرات کو فروغ دینے اور تنازعات کے پرامن حل کے لیے کوشش کرنی چاہیے۔ غزہ کی صورتحال فوری توجہ اور جنگ بندی اور طویل مدتی حل کے لیے کوششوں کی متقاضی ہے۔ امریکہ، ایران اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کو کشیدگی کو کم کرنے اور سلامتی کی صورتحال کو مزید بگڑنے سے روکنے کے لیے سفارتی بات چیت میں شامل ہونا چاہیے۔
شمالی شام میں امریکی حملوں نے مشرق وسطیٰ کے وسیع علاقے پر ان کے اثرات کے بارے میں خدشات کو جنم دیا ہے۔ اگرچہ امریکہ کا دعویٰ ہے کہ یہ کارروائیاں دفاعی نوعیت کی ہیں، ان کا وقت اور علاقائی کشیدگی کے وسیع تناظر میں محتاط اور سفارتی نقطہ نظر کی ضرورت ہے۔ مشرق وسطیٰ میں امن، استحکام اور لوگوں کی فلاح و بہبود کو ترجیح دینا اولین مقصد ہونا چاہیے، یہاں تک کہ پیچیدہ جغرافیائی سیاسی حرکیات خطے کی تقدیر کی تشکیل جاری رکھے ہوئے ہیں۔ اسرائیل اور لبنان کے درمیان جاری سرحدی کشیدگی علاقائی تشویش کا ایک مستقل ذریعہ بنی ہوئی ہے، جو وقتاً فوقتا پرتشدد جھڑپوں میں بھڑکتی رہتی ہے جس کے مزید بڑھنے کا امکان ہوتا ہے۔ ایران کے وزیر خارجہ، امیر عبد لحیان نے حال ہی میں ایک اہم بیان دیا ہے جس نے سوال اٹھائے ہیں اور اس دیرینہ تنازع میں پیچیدگی کی ایک اضافی تہہ ڈال دی ہے۔ ان کا یہ انتباہ کہ ’’ کوئی بھی صورت حال پیدا ہو سکتی ہے‘‘، اگر ’’ صیہونی حکومت کے منظم جنگی جرائم‘‘ کو فوری طور پر بند نہ کیا گیا تو دور رس اثرات کے ساتھ ایک سفارتی اشارہ ہے۔
یہ ایران کے موقف کی عکاسی کرتا ہے، جو اسرائیل کی ریاست کو تسلیم نہیں کرتا اور مشرق وسطیٰ کے دیگر ممالک کے ساتھ اتحاد کرتا ہے جو اسرائیل کی پالیسیوں کے خلاف مخالفانہ موقف رکھتے ہیں۔ لہیان کا بیان ایک علاقائی طاقت کے طور پر ایران کے کردار کی نشاندہی کرتا ہے جو علاقائی تنازعات میں اثر و رسوخ اور دبائو ڈال سکتا ہے۔ اگرچہ ایران نے سفارتی لچک کی سطح بھی برقرار رکھی ہے، جو اس تناظر میں خاص طور پر متعلقہ ہے۔

Facebook
Twitter
Telegram
WhatsApp
Email

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

17 − 3 =