مئی 18, 2024

سیاسی میدان میں ٹھنڈ کا جادو 

تحریر: قادر خان یوسفزئی

آنے والے انتخابات کی تیاری ، عام طور پر متحرک سیاسی منظر نامے ایک غیر معمولی سردی میں ڈوبا ہوا دکھائی دیتا ہے۔ سابق وزیر اعظم عمران خان کی قیادت میں پاکستان تحریک انصاف ( پی ٹی آئی) کو کئی چیلنجوں کا سامنا ہے جنہوں نے سیاسی جوش میں واضح کمی کا باعث بنا ہے۔ جب کہ کچھ لوگ اس کی وجہ انتخابی عمل کو قرار دیتے ہیں، دوسروں کا کہنا ہے کہ سخت موسمی حالات اور استعاراتی ’ سرد موسم‘ نے سیاسی میدان میں ٹھنڈ کا جادو کر دیا ہے۔ کمزور مزاج کی بنیادی وجوہ میں سے ایک انتخابی عمل میں مبینہ مداخلت ہے۔ ناقدین کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی انتخابی نظام کی منصفانہ اور شفافیت سے متعلق مسائل سے دوچار ہے، جس کی وجہ سے جمہوری عمل پر اعتماد کم ہوتا جا رہا ہے۔ انتخابی بے ضابطگیوں کے الزامات اور ووٹنگ کے نظام کی سالمیت کے بارے میں خدشات نے شکوک و شبہات کا ماحول پیدا کر دیا ہے، جس سے بہت سے ووٹروں کو مایوسی ہوئی اور ان کا تعلق ختم ہو گیا۔ تاہم، یہ تسلیم کرنا بہت ضروری ہے کہ سیاسی بے چینی صرف انتخابی خدشات کی پیداوار نہیں ہے۔ نامو افق موسمی حالات نے سیاست دانوں اور ووٹر دونوں کے حوصلے پست کرنے میں کردار ادا کیا ہے۔ سخت موسم نے، خاص طور پر بعض علاقوں میں، مہم کو ایک چیلنجنگ کوشش بنا دیا ہے۔
ان چیلنجوں سے ہٹ کر، صوبہ پنجاب میں ایک گہرا مسئلہ چل رہا ہے۔ اس اہم خطے میں سیاسی ہلچل صرف مسابقت کی کمی کی وجہ سے نہیں ہے۔ بلکہ، یہ سائے میں کام کرنے والی پارٹی کے ظہور سے پیدا ہوتا ہے۔ زمین پر نظر نہ آنے کے باوجود، اس نامعلوم جماعت نے اپنے امیدواروں کو آزاد امیدواروں کے طور پر الیکشن لڑنے کے لیے حکمت عملی کے ساتھ پوزیشن دی ہے۔ اس ڈھکے چھپے انداز نے سیاسی مساوات میں حیرانی کا عنصر ڈالا ہے، جس نے ووٹروں اور سیاسی جماعتوں کو اپنی گرفت میں لے لیا ہے۔ ان عوامل کے امتزاج نے ایک بہترین طوفان برپا کیا ہے، جس سے سیاسی جوش میں کمی واقع ہوئی ہے جس نے پاکستانی انتخابات کو تاریخی طور پر نمایاں کیا ہے۔ رائے دہندگان، جو اب ایک پیچیدہ اور غیر یقینی منظر نامے کا سامنا کر رہے ہیں، بے حسی کے احساس سے دوچار ہے جس سے فروغ پزیر جمہوریت کے بنیادی اصولوں کو خطرہ ہے۔ ایسے نازک موڑ پر سیاسی رہنمائوں، انتخابی اداروں اور شہریوں کے لیے اجتماعی طور پر ان چیلنجز سے نمٹنے کے لیے ضروری ہو جاتا ہے۔ سیاسی وابستگیوں سے قطع نظر انتخابی عمل کی شفافیت کو یقینی بنانا جمہوری نظام پر اعتماد بحال کرنے میں سب سے اہم ہے۔ مزید برآں، پارٹیوں کو چاہیے کہ وہ تخلیقی طور پر منفی موسمی حالات پر غور کریں، ووٹروں سے رابطہ قائم کرنے اور ان کی آواز سنانے کے متبادل طریقے تلاش کریں۔
سیاسی جمود کو پگھلانے کے لیے تمام اسٹیک ہولڈرز کی جانب سے جمہوری مصروفیت کے شعلے کو دوبارہ بھڑکانے کی ٹھوس کوشش کی ضرورت ہے۔ شفافیت، موافقت اور جمہوری عمل سے وابستگی کے ذریعے ہی پاکستان سیاسی سردی کے اس دور سے نکلنے اور متحرک سیاسی شراکت داری کے نئے دور کا آغاز کرنے کی امید کر سکتا ہے۔ جیسے ہی پاکستان آئندہ انتخابات کے لیے تیار ہو رہا ہے، سیاسی مقابلے کی روایات لطیف تبدیلی سے گزر رہی ہے، خاص طور پر صوبہ پنجاب میں، کراچی اور سندھ کے دیگر شہری علاقوں کے ہلچل سے بھرپور سیاسی منظر نامے کے برعکس، جہاں پاکستان پیپلز پارٹی ( پی پی پی) ، متحدہ قومی موومنٹ ( ایم کیو ایم) اور پیرپگارا جیسے متعدد کھلاڑی اپنا اثر و رسوخ ظاہر کرتے ہیں، پنجاب کی سیاسی بساط پر طویل عرصے سے سخت مقابلے کا غلبہ رہا ہے۔
پاکستان کا دل گزشتہ انتخابات میں ان دو جنگجوئوں کے درمیان سیاسی رسہ کشی کا گواہ رہا ہے، جس نے ایک متحرک اور مسابقتی ماحول پیدا کیا جس نے عوامی مشغولیت اور دلچسپی کو ہوا دی۔ تاہم، ایسا لگتا ہے کہ اس انتخابی چکر میں بیانیہ بدل رہا ہے۔ سندھ میں، پی پی پی روایتی طور پر ایک مضبوط سیاسی موجودگی رکھتی ہے، پیچیدہ سماجی اور نسلی منظر نامے کو نفاست سے چلاتی ہے۔ خاص طور پر کراچی ایک میدان جنگ رہا ہے جہاں ایم کیو ایم سمیت مختلف سیاسی قوتیں کنٹرول کے لیے کوشاں ہیں۔ اس متنوع مقابلے کے نتیجے میں اکثر ایک سیاسی ماحول پیدا ہوتا ہے جس کی خصوصیت سازش اور غیر متوقع ہے، جس نے ووٹروں اور تجزیہ کاروں کی توجہ یکساں طور پر حاصل کی ہے۔ انتخابی منظر نامے کو طاقت کی حرکیات کے ایک جھروکے سے نشان زد کیا گیا ہے، جس میں ووٹرز ایک سخت مقابلہ دیکھنے کے عادی ہیں جس نے قوم کی سیاسی رفتار کو تشکیل دیا ہے۔ تاہم، موجودہ سیاسی ماحول معمول سے الگ ہونے کا مشورہ دے رہا ہے، جس سے بہت سے لوگوں کو اس واضح تبدیلی کے پیچھے کی وجوہات پر غور کرنا ہوگا۔
مسابقت کی اس سمجھی جانے والی کمی میں ایک اہم عنصر سیاسی اداروں کی طرف سے انتخابات سے قبل کیے جانے والے سٹریٹیجک انتخاب ہو سکتے ہیں۔ جہاں سندھ میں مختلف جماعتوں کی حمایت کی بنیادیں موجود ہیں، وہیں پنجاب کا سیاسی میدان تبدیل ہوتا دکھائی دے رہا ہے، جس میں چیدہ چیدہ کھلاڑیوں کا غلبہ چھوٹے دعویداروں کو زیر کر رہا ہے۔ پنجاب کا سیاسی منظر، جو کسی زمانے میں سیاسی قوتوں کی متنوع صفوں کا حامل تھا، اب پولرائزڈ ہوتا دکھائی دے رہا ہے، جس کے نتیجے میں انتخابات کے ارد گرد مجموعی جوش و خروش میں ممکنہ کمی واقع ہو رہی ہے۔ مزید یہ کہ پنجاب میں ابھرتی ہوئی سیاسی حرکیات ووٹروں کے بدلتے ہوئے جذبات اور موجودہ پارٹیوں کی طرز حکمرانی کی تاثیر کی عکاس ہوسکتی ہے۔ اگر رائے دہندگان کو ٹھوس متبادل کی کمی محسوس ہوتی ہے یا اگر وہ محسوس کرتے ہیں کہ حکمران جماعت ان کے خدشات کو مناسب طریقے سے دور کرتی ہے، تو تبدیلی کا محرک کم ہو جاتا ہے، اور سیاسی میدان کم ہنگامہ خیز ہو جاتا ہے۔
صوبہ پنجاب ایک وسیع سیاسی منظر نامے کے ایک مائیکرو کاسم کے طور پر کھڑا ہے۔ سیاسی جماعتوں کے درمیان روایتی معرکہ جو کہ پنجاب کی سیاست کا خاصہ رہا ہے، میٹامورفوسس سے گزرتا دکھائی دے رہا ہے۔ آیا حرکیات میں یہ تبدیلی ایک عارضی خرابی ہے یا مزید پائیدار تبدیلی دیکھنا باقی ہے۔ تاہم، یہ سیاسی کھلاڑیوں کو ووٹروں کی ابھرتی ہوئی ضروریات اور توقعات کے مطابق ڈھالنے کی ضرورت پر زور دیتا ہے، اس بات کو یقینی بناتے ہوئے کہ جمہوری عمل مضبوط، مسابقتی، اور لوگوں کی متنوع امنگوں کی عکاسی کرتا رہے۔ ضروری ہے کہ سیاسی جماعتیں اپنے الزامات در الزامات کی سیاست کو ایک طرف کرکے عوام سیاسی شعور کی گہماگہمی اور گرمی پیدا کرے تاکہ سیاسی ماحول میں ٹھنڈ کا جادو ختم ہو سکے ۔

Facebook
Twitter
Telegram
WhatsApp
Email

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

eighteen + 18 =