اپریل 12, 2024

حضرت فاطمہ زہرا (س) کے بارے میں اہل تشیع اور اہل سنت کے مشترکہ 25 نکات

تحریر: محمد شاهد رضا خان

وہابی تکفیری نیٹ ورک، جن کی ہٹ دھرمی اسلام پر ہے اور استعمار اور تیل کے ڈالروں پر ان کا انحصار سب پر واضح ہے، تاریخی حقائق کو توڑ مروڑ کر پیش کرتے ہیں اور یہ جھوٹا دعویٰ کرتے ہیں کہ حضرت ابوبکر نے حضرت زہرا (س) کے جسم پر نماز پڑھی تھی اور یہی معاملہ صحیح ہے۔ بخاری واضح طور پر کہتا ہے: علی (ع) نے فاطمہ کے جسم پر نماز پڑھی نہ کہ کسی اور نے

تکفیری وہابیت اپنے میڈیا پروپیگنڈے میں حضرت فاطمہ (س) کی زندگی سے متعلق واقعات اور مسائل کو چھپانے کی کوشش کرتی ہے یا انہیں شیعوں کی تخصیص اور جعلسازی کا حصہ بناتی ہے۔ جبکہ معتبر اور مشہور سنی ذرائع نے حضرت زہرا (س) کی شخصیت اور عظمت اور اس اعلیٰ خاتون کی سماجی سرگرمیوں اور سیاسی عہدوں کی وسیع جہتیں بیان کی ہیں۔

عام طور پر حضرت فاطمہ (س) کی شخصیت اور تاریخ کے بارے میں شیعہ اور سنی منابع میں کم از کم 25 مشترک موضوعات ہیں جو اس نوٹ میں درج ہیں۔

1۔ آیت تطہیر (احزاب/33)

سنی علماء کی اکثریت نے اس آیت کو امیر المومنین علی (ع)، حسنین (ع) اور حضرت زہرا (س) کی شان میں شمار کیا ہے۔

ابن حجر مکی لکھتے ہیں: “اکثر مفسرین نے لکھا ہے یہ آیت شریفہ علی، فاطمہ، حسن اور حسین علہیم السلام کی شان میں نازل ہوئی ہے ” (الصواعق المحرقہ، ص 172)

  1. آیت مباہلہ (آل عمران/61)

تمام اہل سنت مفسرین کا خیال ہے کہ اس آیت میں لفظ “نسائنا” کے معنی صرف حضرت صادقہ طاہرہ (س) ہیں۔

  1. آیت ذوی القربی (اسراء/26)

جب آیت “و آت ذا القربی حقہ” نازل ہوئی تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت فاطمہ (س)کو فدک عطا فرمایا۔ سیوطی نے درالمنشور (جلد 5، صفحہ 238) میں نقل کیا ہے کہ “اس آیت کے نزول کے بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فاطمہ(س) کو فدک عطا کیا”۔ اس حدیث کو ابو علی، ابن ابی حاتم اور ابن مردویہ نے اسے ابی سعید خدری سے روایت کیا ہے۔ (مزید دیکھیے: میزان الاطلاع، ج2، ص288 اور کنزالعمال، ج2، ص158)۔

  1. خلیفہ اول نے فدک حضرت زہرا (س) کو واپس نہیں کیا۔

جناب بخاری نے مسئلہ فدک کی طرف اشارہ کرتے ہوئے لکھا ہے: “ابی ابوبکر نے فاطمہ سے اعراض نہیں کیا سوائے کسی چیز کے” (صحیح بخاری، جلد 5، صفحہ 82)۔ ابوبکر نے فدک سے فاطمہ کو کچھ واپس نہیں کیا۔

5۔ حضرت زہرا کا غصہ اور غصہ سے خلیفہ اول سے منہ موڑنا

فدک کی حدیث بیان کرنے اور اسے حضرت زہرا (س) کی طرف واپس نہ کرنے کے بعد، بخاری نے “فہجرتہ” کا لفظ استعمال کیا ہے، جس کا مطلب ہے کہ حضرت زہرا (س) نے غصے کی علامت کے طور پر اپنا مبارک چہرہ خلیفہ سے پھیر دیا۔ (صحیح بخاری، ج5، ص82)۔

6۔ حضرت زہرا کا خلیفہ اول سے بات کرنے سے انکار

اسی روایت میں بخاری نے “فلم تکلمہ حتی طفیت” کا جملہ نقل کیا ہے جس کا مطلب ہے کہ حضرت زهرا (س) نے اپنی زندگی کے آخر تک خلیفہ سے کوئی بات نہیں کی۔ (صحیح بخاری، جلد 5، صفحہ 82) اور یہ خلیفہ اول کی طرف حضرت زهرا(س) کے غصے کی علامت ہے۔

7۔ حضرت زہرا (س) کی شب تدفین.

بخاری نے بیان کیا ہے کہ علی (ع) نے رات کو اپنی بیوی کو دفن کیا۔ (صحیح بخاری، ج5، ص82)۔ حضرت زھرا(س)کی شب تدفین کے اسرار و اسباب احتیاط اور علم رکھنے والوں سے پوشیدہ نہیں۔

8۔ حضرت زہرا (س) کی تجہیز و تکفین سے خلیفہ اول کو بے خبر چھوڑنا.

صحیح بخاری (جلد 5، ص 82) میں بیان کیا گیا ہے کہ “و لم یوذن بہا ابوبکر”

امیر المومنین علی (ع) نے ابوبکر کو فاطمہ کی تجہیز و تکفین کے بارے میں مطلع نہیں کیا اور درحقیقت ابوبکر کو اجازت نہیں دی۔ تقریب میں شرکت کے لیے۔

بلاشبہ خلیفہ اول کو مطلع نہ کرنا ایک اہم پیغام کا حامل ہے جو آزاد مفکرین سے پوشیدہ نہیں۔

  1. حضرت زہرا (س) کے جسد خاکی پر امیر المومنین علی علیہ السلام نے نماز پڑھی.

تکفیری وہابی نیٹ ورک جن کی ہٹ دھرمی اسلام پر ہے اور استعمار اور تیل کے ڈالروں پر ان کا انحصار سب پر واضح ہے، تاریخی حقائق کو توڑ مروڑ کر پیش کرتے ہیں اور یہ جھوٹا دعویٰ کرتے ہیں کہ حضرت ابوبکر نے حضرت زہرا (س) کے جسم پر نماز پڑھی تھی

جبکہ صحیح بخاری نے واضح بیان کیا ہے کہ علی (ع) نے فاطمہ (س) کے جسم پر نماز پڑھی نہ کہ کسی اور نے۔

10۔ حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا کی شب دفن کی وجہ.

بعض سنی ذرائع نے رات کو تدفین کی وجہ اور اس سے متعلق روایات کا ذکر نہیں کیا، لیکن بعض، جیسے ابن بطال القرطبی نے صحیح البخاری میں لکھا ہے (جلد 3، ص 335، مطبوعہ 1423 ریاض):

حضرت علی بن ابی طالب نے اپ

نی اہلیہ فاطمہ (س) کی تدفین رات کو انجام دی

علی نے اپنی بیوی کو رات کو دفنایا تاکہ ابوبکر اس پر نماز نہ پڑھ سکے

11۔ علی علیہ السلام نے فاطمہ(س) کو غسل دیا.

ابن عبد البر المالکی نے لکھا ہے: “و غسلھا زوجھا علی بن ابیطالب”

(الاستعاب، جلد 4، صفحہ 1898)۔ علی (ع) نے اپنی بیوی کو غسل دیا۔

  1. فاطمہ کے غضب اور رضایت میں خدا کا غضب اور رضایت.

حکیم نیشاابوری نے المستدرک (جلد 3، صفحہ 118، حدیث 4773) میں نقل کیا ہے: “بے شک اللہ ناراض ہوتا ہے فاطمہ(س) کے ناراض ہونے سے اور اللہ راضی ہوتا ہے فاطمہ(س) کے راضی ہونے سے ”

یہ اس حقیقت کے باوجود ہے کہ فاطمہ (س) نے ابوبکر سے بات نہیں کی تھی، اسی طرح فاطمہ (س) کا ان سے منہ موڑنا اور ناراض ہونا، سنی منابع میں ایک مسلم ہے۔

  1. فاطمہ (س) کا غضب رسول خدا (ص) کا غضب ہے۔

بخاری نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے نقل کیا ہے کہ فاطمہ(س) میرے جسم کا حصہ ہے اور جس نے انہیں ناراض کیا اس نے مجھے ناراض کیا۔ بلاشبہ فاطمہ (س) کا کسی شخص سے نہ بولنا اور اس سے منہ موڑنا اس شخص پر رسول خدا (ص) کے غضب کی مضبوط دلیل ہے۔

  1. فاطمہ کو اذیت دینا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اذیت پہنچانا ہے۔

صحیح مسلم (جلد 5، ص 141) نے رسول اللہ (ص) سے ایک حدیث نقل کی ہے: “فاطمہ(س)میرا ایک ٹکڑا ہے، فاطمہ(س) میرا حصہ ہے”

کیا فاطمہ(س) کا بعض لوگوں سے بات نہ کرنا اور ان سے منہ موڑنا اس بات کی علامت نہیں ہے کہ وہ ان لوگوں کی طرف سے ہراساں تھیں؟

15۔ فاطمہ سب سے زیادہ راستگوترین انسان ہیں۔

مستدرک (جلد 3، صفحہ 124، حدیث 4800) میں حاکم نیشابوری نے مؤمنین کی والدہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے ایک حدیث نقل کی ہے: عائشہ کہتی ہیں: میں نے فاطمہ(س) سے زیادہ سچا کوئی نہیں دیکھا۔

سوال یہ ہے کہ جب فاطمہ نے کہا: “فدک مجھے میرے والد نے ان کی زندگی میں دیا تھا” تو کیا وہ اسے قبول کرے یا گواہ طلب کرے؟ خلیفہ کا فاطمہ(س) سے سوال کرنا فاطمہ کی بے مثال سچائی سے مطابقت نہیں رکھتا۔

16۔ فاطمہ جنت میں داخل ہونے والی پہلی شخصیت ہیں۔

حاکم نیشابوری نے مستدرک میں (جلد 3، صفحہ 116، حدیث 4766) علی (ع) کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: سب سے پہلے جنت میں داخل ہونے والے میں، فاطمہ، حسن اور حسین ہیں۔ علی (ع) نے پوچھا: ہمارے چاہنے والوں کا کیا ہوگا ؟ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: وہ تمہارے پیچھے ہیں۔

17۔ حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا منظرِ قیامت میں کیسے داخل ہونگی؟

 

حاکم نیشابوری المستدرک میں (جلد 3، صفحہ 118، حدیث 4771) امیر المومنین علی علیہ السلام سے روایت نقل کرتے ہیں: “رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

جب قیامت کا دن آئے گا تو منادی عرش سے ندا دے گا، اے اہل محشر، اپنی نگاہیں نیچی کر لو۔ حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا گزرنا چاہتی ہیں۔

حاکم نیشابوری نے اس روایت کو صحیح سمجھا ہے.

18۔ فاطمہ (س) رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے نزدیک سب سے زیادہ محبوب ہیں۔

حاکم نیشابوری نے المستدرک (جلد 3، ص 121) میں جامع بن عمیر نامی شخص سے حدیث نقل کی ہے۔ وہ کہتے ہیں: میں اپنی خالہ کے ساتھ عائشہ رضی اللہ عنہا کی خدمت میں گیا۔ عائشہ رضی اللہ عنہا نے رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے محبوب ترین لوگوں کے بارے میں پوچھا تو آپ نے فرمایا: وہ فاطمہ (س) ہیں۔

  1. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے والدین حضرت فاطمہ (س) قربان۔

حاکم نیشابوری نے المستدرک (جلد 3، صفحہ 120) میں یہ حدیث بیان کی ہے کہ رسول اللہ نے فرمایا: “فدک ابی وامی” میرے والد اور والدہ آپ پر قربان ہوں۔

20۔ فاطمہ کے گھر کے دروازے پر آیت پاک کی تلاوت.

حاکم نیشابوری نے المستدرک میں (جلد 3، صفحہ 122) انس بن مالک سے روایت کی ہے کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

چھ مہینے تک صبح کی نماز کے وقت فاطمہ کے گھر سے گزرتے تھے اور آیت تطہیر کی تلاوت کیا کرتے تھے” حاکم نیشاابوری اور ذہبی نے اس روایت کو صحیح کہا ہے۔

21۔ فاطمہ (س) قیامت میں رسول اللہ (ص) سے پہلے.

الحاکم نے المستدرک میں (جلد 3، ص 117) یہ حدیث ابوہریرہ سے روایت کی ہے کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا: فاطمہ(س) قیامت میں مجھ سے پہلے ہونگی۔

  1. فاطمہ (س) کا گھر انبیاء (ع) کے گھر سے زیادہ فضیلت والا ہے،

سیوطی نے درالمنشور (ج 6، صفحہ 186) میں انس بن مالک اور بریدہ رضی اللہ عنہ سے روایت کی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے آیت ’’فی بیوت ‘ آپ نے تلاوت کی۔ ایک شخص نے کھڑے ہو کر حضرت سے پوچھا کہ یہ کس کا گهر ہے؟. حضرت نے فرمایا: انبیاء کا گھر۔ ابوبکرؓ کھڑے ہوئے اور کہا: علی(ع) و فاطمہ(س) کا گھر انبیاء کا گھر ہے

حضرت نے فرمایا: ہاں میں بہترین گھر میں سے ہوں،

اور ہاں علی (ع) اور فاطمہ (س) کا گھر سب سے بہتر ہے۔ رسول اللہ (صلی اللہ

علیہ وآلہ وسلم) کی وفات کے بعد لوگوں نے اس آیت کے ساتھ کیا سلوک کیا اس پر ایک اور بحث کی ضرورت ہے۔

  1. فاطمہ سلام اللہ علیہا امت مسلمہ کے درمیان اتحاد کی وجہ ہیں۔

 

حاکم نے مستدرک میں (جلد 3، صفحہ 115) ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت کی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ستارے زمین والوں کو غرق ہونے سے محفوظ رکھتے ہیں

اور میری اہلبیت(ع) امت کے درمیان اختلاف سے حفاظت کا سبب ہیں

میری اہلبیت(ع) امت کے درمیان اتحاد و وحدت کا سبب ہے۔

حاکم بیشابوری نے اس روایت کو صحیح سمجھا۔

  1. فاطمہ (س) کے جنین کا اسقاط حمل اور شہادت ایک ناقابل تردید حقیقت ہے

جوینی، جو کہ ذہبی کا استاد ہیں، فرائد السمطین میں (جلد 2، صفحہ

26، حدیث 366، شامی ایڈیشن) لکھتا ہے

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے نقل کیا ہے کہ: جس وقت میں اپنی بیٹی فاطمہ کو دیکھتا تھا تو مجھے یاد آ جاتا۔ اس کا مستقبل میں دیکھتا ہوں کہ اس کا حق غصب کیا جائے گا اور اس کی میراث نہیں دیں گے ، اس کا پہلو توڑ دیا جائے گا اور اس کا بچہ سقط کیا جائے گا۔ «وَ أَنِّی لَمَّا رَأَیْتُهَا ذَکَرْتُ مَا یُصْنَعُ بِهَا بَعْدِی کَأَنِّی بِهَا وَ قَدْ دَخَلَ الذُّلُّ فی بَیْتَهَا وَ انْتُهِکَتْ حُرْمَتُهَا وَ غُصِبَتْ حَقَّهَا وَ مُنِعَتْ‏ إِرْثَهَا وَ کُسِرَ جَنْبُهَا وَ أَسْقَطَتْ جَنِینَهَا وَ هِیَ تُنَادِی یَا مُحَمَّدَاهْ فَلَا تُجَابُ وَ تَسْتَغِیثُ فَلَا تُغَاثُ».

  1. اہل بیت کے دشمنوں کا ٹھکانہ جہنم ہے۔

حاکم نے مستدرک میں (جلد 3، صفحہ 115) اس حدیث کو ابو سعید خدری کی سند کے ساتھ نقل کیا ہے کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا: “والذی نفسی بیدا لا یبغزنا اہل البیت احد الا اسکوہ اللہ النار”۔ قسم ہے اس ذات کی جس کے ہاتھ میں اقتدار ہے کوئی بھی ہمارے اہل بیت سے دشمنی نہیں کرے گا جب تک کہ خدا اسے جہنم میں نہ بھیج دے۔

بلاشبہ حضرت زہرا (س) اہل بیت میں سے ہیں۔ اس صحیح حدیث کے مطابق بغض و عداوت کے ساتھ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کا حق غصب کرنے والے اس حدیث میں شامل ہیں۔

آخر میں، یہ یاد رکھنے کے قابل ہے کہ شیعہ مندرجہ بالا تمام معاملات میں اہل سنت سے متفق ہیں؛ لیکن تکفیری وہابیت، جو سنی اور شیعہ مذاہب میں سے کسی کو تسلیم نہیں کرتی، کا مقصد تاریخی واقعات اور میڈیا کے جھوٹ کو چھپانا اور مسخ کرنا ہے۔

Facebook
Twitter
Telegram
WhatsApp
Email

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

11 − 6 =