اپریل 21, 2024

اسرائیلی یرغمالیوں کی تلاش اور ثالثی میں قطر کا کردار

تحریر: قادر خان یوسفزئی

سات اکتوبر بروز ہفتہ جب یہودی اپنا مذہبی تہوار منا رہے تھے، حماس کے سرپرائز حملے میں اسرائیل کو شد ید سبکی کا سامنا ہوا، ایک جانب تو حماس نے اسرائیلی سیکورٹی پالیسی کو بری طرح ناکام بنایا تو دوسری جانب دفاعی اعتبار سے مضبوط قرار دیئے جانے والے غاصب کو ناکوں چنے چبوا دیئے، اسرائیل نے اپنی ناکامی کا بدلہ عام شہریوں پر وحشیانہ بمباری سے لینا شروع کر دیا ہے اور روزمرہ زندگی کے اشیا ء ضرورت، انٹر نیٹ، بجلی پانی کی بند ش سمیت غزہ کو محاصرے میں لے کر قبضے اور انتقام کی کھلی دھمکیاں دی جا رہی ہیں۔ اسرائیلی وزیر دفاع کے اشتعال انگیز انتقامی تقریر نے عالمی برادری کے سامنے یہ سوال کھڑا کر دیا ہے کہ کیا اسرائیل، جو نہتے بچوں عوام، عام رہائشی مقامات پر حملوں سمیت جارحیت کی بدترین مثالیں قائم کر رہا ہے، کیا وہ درست ہیں؟۔ اس پر انسانی حقوق کی تنظیمیں اور امریکہ سمیت عالمی قوتیں خاموش کیوں ہیں اور یوکرین روس تنازع کی طرح مغرب دوہرے معیار ر پر گامزن کیوں ہے؟۔
حالیہ تنازع میں اسرائیلیوں کو حماس کی جانب سے یرغمال بنائے جانے کے دعوے سامنے آئے ہیں اسرائیل سمیت آزاد ذرائع اس امر کی تصدیق کر رہے ہیں کہ حماس نے اسرائیلیوں کو گرفتار کیا ہے جس میں ایک بڑی تعداد فوجیوں کی بھی ہے۔
مشرق وسطیٰ ایک طویل عرصے سے تنازعات اور ہنگامہ آرائی کا شکار خطہ رہا ہے، اسرائیل فلسطین تنازع اس کے سب سے زیادہ متنازع مسائل میں سے ایک ہے۔ حالیہ برسوں میں، بین الاقوامی سفارت کاری میں ایک اہم پیش رفت دیکھنے میں آئی ہے کیونکہ قطر نے حماس، فلسطینی مزاحمت کار گروپ اور اسرائیل کے درمیان مذاکرات میں ثالثی کا اہم کردار ادا کر رہا ہے۔ ان مذاکرات میں قیدیوں کے تبادلے سمیت متعدد امور پر توجہ مرکوز کی گئی۔ حماس، جو غزہ کی پٹی کو کنٹرول کرتی ہے، اسرائیل کے ساتھ ایک پیچیدہ تعلقات رکھتی ہے جس کی خصوصیات متواتر تشدد، جنگ بندی اور مذاکرات ہیں۔ مزاحمت کار گروپ مسلسل اسرائیلی جیلوں میں قید فلسطینی قیدیوں کی رہائی کے لیے کوشاں ہے۔ یہ مقصد کئی کلیدی محرکات سے چلتا ہے۔ حماس کا خیال ہے کہ اسرائیلیوں کو یرغمال بنائے رکھنا انہیں اسرائیل کے ساتھ مذاکرات میں اہم فائدہ فراہم کر سکتا ہے۔ فلسطینی قیدیوں کی رہائی فلسطینی آبادی کے لیے ایک گہرا جذباتی اور سیاسی طور پر چارج شدہ مسئلہ ہے۔ ان قیدیوں کی آزادی کو یقینی بنا کر، حماس فلسطینیوں کے درمیان اپنا موقف مضبوط کر تی ہے اور ٹھوس نتائج دینے کی اپنی صلاحیت کا مظاہرہ کر تی ہے۔
تاریخی طور پر، قیدیوں کا تبادلہ اسرائیلی اور فلسطینی دونوں قیدیوں کی رہائی کو محفوظ بنانے کا ایک عام ذریعہ رہا ہے۔ حماس اس طرح کے تبادلوں کو اپنے رضا کاروں اور حامیوں کے ساتھ اپنی وابستگی کا مظاہرہ کرنے، اپنی صفوں میں وفاداری اور یکجہتی کو فروغ دینے کے طریقے کے طور پر دیکھتا ہے۔ اسرائیلی یرغمالیوں کی رہائی حماس کے لیے ایک پروپیگنڈا فتح کا باعث بنتی ہے، جو اسرائیل کے خلاف اپنی مزاحمت کو ظاہر کرتے اور خود کو فلسطینیوں کے حقوق کے محافظ کے طور پر پیش کرتے ہیں۔ اس سے حماس کی ملکی اور حمایت یافتہ ممالک سے تعلقات کو برقرار اور بڑھانے میں مدد مل سکتی ہے۔ حماس کا دعویٰ ہے کہ وہ اسرائیلی جیلوں میں اکثر سخت حالات کا سامنا کرنے والے فلسطینی قیدیوں کے ساتھ انسانی سلوک اور رہائی کی وکالت کر رہا ہے۔ یہ موقف فلسطینی معاشرے کے وسیع میدان میں گونجتا ہے، جس سے گروپ کی مقبولیت میں مزید اضافہ ہوتا ہے۔ اسرائیلی یرغمالیوں کا تعاقب کرنے کے لیے حماس کے محرکات واضح ہیں، تاہم اس تعاقب میں ممکنہ فوائد اور چیلنجز زیادہ پیچیدہ ہیں۔
قیدیوں کی رہائی کے لیے کامیاب مذاکرات سے فلسطینی مزاحمتی تحریک میں حماس کی شبیہ کو ایک مضبوط کردار کے طور پر تقویت ملتی ہے۔ یرغمالیوں کا ایک کامیاب تبادلہ حماس کی مذاکراتی پوزیشن کو بڑھا دے گا، جو ممکنہ طور پر مستقبل کے مذاکرات میں اسرائیل سے مزید رعایتوں کا باعث بن سکتا ہے۔ فلسطینی قیدیوں کی رہائی کے حصول سے حماس کو فلسطینیوں میں مقبولیت میں اضافہ ہو گا، اور غزہ پر اپنی گرفت مضبوط ہو گی۔ اسرائیلی یرغمالیوں کو محفوظ بنانے میں حماس کی کامیابی کا زیادہ تر انحصار قطر کی ثالثی کی کوششوں اور اس کی ثالثی کرنے کی صلاحیت پر ہے جو دونوں فریقوں کے لیے قابل قبول ہو۔ قطر اپنے علاقائی اثر و رسوخ، سفارتی صلاحیتوں اور دونوں فریقوں کے ساتھ مشغول ہونے کی خواہش کی وجہ سے اسرائیل اور حماس کے مذاکرات میں ایک اہم ثالث کے طور پر ابھرا ہے۔
قطر کی ثالثی کی کوششوں کی خصوصیت اس کی سفارتی عملیت پسندی اور اسرائیل فلسطین تنازع کے پرامن حل کی ضرورت کو تسلیم کرتی ہے۔ ان مذاکرات میں ثالثی میں قطر کے کردار کے کئی فائدے ہیں۔ خطے میں ایک غیر جانبدار اداکار کے طور پر قطر کی ساکھ اسے حماس اور اسرائیل دونوں کے ساتھ اعتماد پیدا کرنے، اور اسے ایک قابل اعتماد ثالث بناتی ہے، امریکہ اور افغان طالبان کے درمیان کامیاب مذاکرات میں ثالثی سے قطر کی پوزیشن مضبوط قرار دی جاتی ہے۔ قطر کا سفارتی اثر مشرق وسطیٰ سے باہر تک پھیلا ہوا ہے، جو اسے امن عمل کے لیے دیگر علاقائی اور بین الاقوامی سٹیک ہولڈرز کی حمایت حاصل کرنے کے قابل بناتا ہے۔
حماس کا اسرائیلی یرغمالیوں کا تعاقب ایک کثیر جہتی حکمت عملی کی نمائندگی کرتا ہے جس کا مقصد سیاسی، پروپیگنڈا اور انسانی مقاصد کو حاصل کرنا ہے۔ قیدیوں کی رہائی کو یقینی بنانے کے ممکنہ فوائد اہم ہیں، لیکن وہ کافی چیلنجوں کے ساتھ ہیں، بشمول اسرائیلی ہچکچاہٹ اور ممکنہ بین الاقوامی ردعمل۔ قطر کی ثالثی کی کوششیں ان چیلنجوں اور تخلیقات سے نمٹنے کے لیے اہم ہیں۔ جنگ بندی کی صورت میں یرغمالیوں کی رہائی ایک بڑا اہم مرحلہ ہوگا۔

Facebook
Twitter
Telegram
WhatsApp
Email

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

4 × two =