اپریل 9, 2024

پاکستانی سکیورٹی فورسز کا افغانستان کے اندر ٹی ٹی پی کے خلاف کاروائی کا امکان

سیاسیات- ترکی کے ذرائع ابلاغ نے حالیہ دہشت گردی کے واقعات کے بعد امکان ظاہر کیا ہے کہ پاکستانی سیکورٹی فورسز افغانستان میں قائم تحریک طالبان پاکستان کے ٹھکانوں پر حملہ کرسکتی ہیں۔

ترک خبررساں ادارے اناتولی نے کہا ہے کہ تحریک طالبان پاکستان کی حالیہ کاروائیوں کے بعد اس بات کے وسیع امکانات ہیں کہ پاکستانی مسلح افواج اس دہشت گرد تنظیم کے افغانستان میں قائم نیٹ ورک کے خلاف کروائی کریں گی۔

ٹی ٹی پی کی دہشتگردانہ کاروائیوں کی وجہ سے اسلام آباد اور کابل درمیان کشیدگی بڑھ گئی ہے۔ گزشتہ ہفتے تقریبا ہر روز تنظیم نے صوبہ خیبر پختونخوا میں پاکستانی فورسز پر حملے کئے ہیں۔ 14 جولائی کو بلوچستان میں فوجی چھاونی پر حملے کے بعد پاکستانی حکام نے افغان طالبان کے خلاف شدید لہجہ اختیار کیا تھا۔

وزارت داخلہ اور مسلح افواج کے اعلی حکام نے افغانستان میں ٹی ٹی پی کو حاصل آزادی کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔ افغان امور کے ماہر صحافی ظاہر خان کے مطابق بلوچستان میں ہونے والا حملہ مکمل منصوبہ بندی کے ساتھ کیا گیا تھا اور اس حملے میں جدید امریکی اسلحہ استعمال کیا گیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ پاکستانی حکام کابل کے ساتھ ٹی ٹی پی کو سرحدی علاقوں سے افغانستان کے اندرونی علاقوں میں منتقل کرنے کے معاہدے پر عملدرآمد سے مایوس ہوگئے ہیں۔ اعلی عسکری حکام کے بیانات سے ظاہر ہوتا ہے کہ پاکستان افغانستان کے اندر ٹی ٹی پی کے ٹھکانوں کو نشانہ بنانے کا فیصلہ کرچکا ہے۔

Facebook
Twitter
Telegram
WhatsApp
Email

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

4 − two =