جولائی 15, 2024

اسرائیل پالیسی پر قائد اعظم کی رائے سے اختلاف کفر نہیں۔ کاکڑ

سیاسیات- نگران وزیراعظم انوار الحق کاکڑ  نےکہا ہےکہ  قائد اعظم  نے اسرائیل کے معاملے  پر جو رائے دی تھی اس سے اختلاف کرنا ‘کفر’ نہیں ہوگا۔

ایک انٹرویو میں نگران وزیراعظم انوار الحق کاکڑ کا کہنا تھا کہ ‘دو ریاستی حل’ ہی مسئلہ فلسطین کا واحد حل ہے۔

نگران  وزیراعظم کا کہنا تھا کہ فلسطین کے دو ریاستی حل کی تجویزپاکستان یا میں نے نہیں دی، فلسطین کا دو ریاستی حل دنیا دے رہی ہے، یہ تاثر درست نہیں کہ فلسطین کا دو  ریاستی حل ہم نے دیا۔

ایک نگران وزیراعظم کیسے یہ پالیسی دے سکتا ہے؟ سینیٹر مشتاق

ادھر نگران وزیراعظم کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق احمد نے ایک بیان میں کیا کہ یہ صرف قائداعظم کی نہیں علامہ اقبال کی بھی پوزیشن تھی جو کہ عدل، انصاف، بین الاقوامی قوانین کے مطابق تھی اور ہے۔

سینیٹر مشتاق کے مطابق یہ بھی غلط ہے کہ پوری دنیا ایسا کہہ رہی ہے، دنیا میں اس موضوع  پر کئی آراء پائی جاتی ہیں، صرف مغربی بلاک امریکی قیادت میں یہ راگ الاپ کر اپنے جرائم کی سزا فلسطینوں کو دینا چاہتا ہے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ قائد اعظم اور  علامہ اقبال کی پوزیشن کو تبدیل کرنےکا اختیار کسی نگران وزیراعظم  کو نہیں ہے، پارلیمنٹ میں اس پر بحث نہیں ہوئی اور نہی ہی کسی منتخب حکومت نے اس کی منظوری نہیں دی ہے،  ایک نگران وزیراعظم کیسے دو ریاستی حل کی پالیسی دے سکتا ہے اور  وہ بھی  اس حالت میں کہ وہاں پر نسل کشی اور انسانیت کے خلاف جرائم جاری ہیں، اس موقع پر دو ریاستی حل کی بات زخموں پر نمک پاشی ہے۔

Facebook
Twitter
Telegram
WhatsApp
Email

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

nineteen + 17 =