جولائی 13, 2024

جوبائیڈن کی یکطرفہ اسرائیل پالیسی، کئی امریکی عہدیدار پریشان

سیاسیات- جوبائیڈن انتظامیہ کی اسرائیل پالیسی سے متعلق کئی امریکی عہدیداروں اور سفارت کاروں میں بے چینی پائی جاتی ہے۔

عرب نشریاتی ادارے نے دعویٰ کیا ہے امریکی عہدیداروں اور سفارت کاروں نے انہیں بتایا کہ بائیڈن انتظامیہ میں اسرائیل پالیسی سے متعلق فیصلوں کے موقع پر عربوں کی زندگی کے مقابلے میں اسرائیلیوں کی زندگی کو زیادہ اہمیت دی جا رہی ہے۔

فلسطین اور اسرائیل کے درمیان پیدا ہونے والی حالیہ کشیدگی کے دوران امریکی صدر جو بائیڈن کے مشرق وسطیٰ کے دورے سے متعلق خیال کیا جا رہا تھا کہ وہ کشیدگی کی روکتھام کیلئے اسرائیلی اور عرب قیادت سے ملاقاتیں کرکے جنگ بندی اور انسانی جانوں کے ضیاع کو روکنے کیلئے اقدامات کریں گے۔

رپورٹ کے مطابق اردن کی جانب سے چار فریقی اجلاس منسوخ کرنے کے بعد جو بائیڈن کے اسرائیلی وزیر اعظم سے یکطرفہ ملاقات کرکے واپسی کے فیصلے پر کئی امریکی عہدیدار اور سفارت کار حیرت میں مبتلا ہو گئے تھے۔

امریکی عہدیداروں اور سفارت کاروں کا خیال ہے کہ مزید فلسطینیوں کی ہلاکتوں کیلئے اسرائیل کو فوجی آپریشن کیلئے گرین سگنل دیکر صدر جو بائیڈن معاملے کو مزید بدتر کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔

عرب میڈیا کے مطابق امریکی محکمہ خارجہ کی جانب سے خاص عہدیداروں کو ایک انٹرنل ای میل کے ذریعے بھیجے گئے ہدایت نامے میں انہیں اسرائیل اور فلسطین کے حالیہ تنازعے سے متعلق ’جنگ بندی‘، ’شدت میں کمی‘ اور ’تحمل کا مظاہرہ‘ (Restoring Calm) جیسے الفاظ استعمال کرنے سے منع کیا گیا تھا۔

عرب میڈیا نے ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیا کہ امریکی عہدیداروں اور سفارت کاروں کا کہنا ہے کہ جس طرح بائیڈن انتظامیہ کے ایک ٹولے نے اسرائیل کیلئے اپنے غیر مشروط حمایت کا اعادہ اور بے گناہ فلسطینیوں کو نظر انداز کیا ہے اس سے کئی لوگ بے چینی کا شکار ہوکر اپنے عہدے چھوڑنے سے متعلق سوچ رہے ہیں۔

عرب میڈیا کے مطابق بائیڈن انتظامیہ میں کچھ عرب عہدیدار بھی تعینات ہیں انہوں نے بھی بائیڈن کی اسرائیل نواز پالیسی پر اپنے تحفظات کا اظہار کردیا ہے۔

ہفنگٹن پوسٹ کی رپورٹ کے حوالے سے بتایا گیاکہ موجودہ امریکی سفارت کاروں کی جانب سے بیجھے گئے ایک خفیہ اختلافی خط (Dissent cable) میں اسرائیل سے متعلق یکطرفہ امریکی مؤقف کو تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق انسانی بنیادوں پر جنگ بندی سے متعلق اقوام متحدہ کی قرارداد کو امریکا کی جانب سے ویٹو کرنے کے بعد کچھ عہدیدار اور سفارت کاروں نے اپنے عہدے چھوڑنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔

اس سے قبل امریکی محکمہ خارجہ کے ایک سینیئر عہدیدار حالیہ اسرائیل فلسطین تنازع پر بائیڈن انتظامیہ کی اسرائیل نواز پالیسی سے اختلاف پر احتجاجاً اپنے عہدے سے مستعفی ہو چکے ہیں جبکہ تازہ رپورٹ کے مطابق مزید عہدیدار بھی اسی قسم کی اقدام کی تیاری کر رہے ہیں۔

Facebook
Twitter
Telegram
WhatsApp
Email

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

thirteen + thirteen =